Category Archives: Uncategorized

ایک انقلابی کی ڈائری



ہمیں حالات حاضرہ کے بارے میں جاننے اور تبصرہ کرنے کا بہت شوق ہے۔ یہ نہ تو ہماری تعلیم کا کمال ہے نہ ہمارے تجربے کا، یوں سمجھئے جیسے ہمیں یہ شوق ورثے میں ملا ہو۔ سیاسی جماعتوں کی کارکردگی پر تبصرے ہوں، یا ملک کے حالات کے بارے میں ماہرانہ رائے کا اظہار، بجلی اور پٹرول کی قیمتوں میں اضافے کے پیچھے چھپی سازش کا سراغ لگانا ہو، یا امریکی و برطانوی سازشوں سے پردہ اٹھانا ہو، ہم ہر فن مولا ہیں۔

ایسی بات نہیں کہ ہم کوئی کام کاج نہیں کرتے۔ ہمارا دن کافی مصروف گزرتا ہے، صبح اٹھ کر نماز پڑھتے ہیں، پھر نماز کے بعد مسجد میں اپنے دوستوں کے ساتھ بیٹھ کر ملک کے حالات پر افسوس کا اظہار کرتے ہیں۔ ان حکمرانوں نے اس ملک کو تباہ کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی، اس لئے ان کی حکومت کے خاتمے کی اجتماعی دعا کا خصوصی اہتمام کیا جاتا ہے۔

ناشتے کے بعد ہم دفتر جاتے ہیں۔ دفتر میں چونکہ کام زیادہ ہوتا ہے، اس لئے اخبار ساتھ لے کر دراز میں رکھ لیتے ہیں کہ اگر موقع ملا تو کچھ ملکی حالات سے واقفیت حاصل ہوسکے گی۔ 10 بجے کی چائے پر دفتر کے ساتھی کینٹین میں جمع ہوتے ہیں۔ سب کا یہی رونا ہوتا ہے کہ اس حکومت نے ملک کا بیڑا غرق کردیا ہے۔ یہ بحث کبھی کبھار طول پکڑ جاتی ہے اور ہمیں بحث کو ختم کرنے کے لئے اخباری تراشے اور حوالے دینے پڑتے ہیں۔ یہ کام اگرچہ دفتری سرگرمی نہیں لیکن ملک کی بہتری کے لئے ہم رضاکارانہ طور پر یہ خدمات انجام دیتے ہیں۔

خدا بھلا کرے مارک زکربرگ کا، جنہوں نے ہم جیسے سیاسی کارکنوں پر فیس بک کی شکل میں ایک بہت بڑا احسان کیا ہے۔ فیس بک کو ہم آگاہی کے لئے استعمال کرتے ہیں۔ اپنی پسندیدہ سیاسی جماعت کے فیس بک پیج پر10، 12 تبصرے تو ہم روزانہ کرتے ہیں۔ چونکہ یہ روزانہ کا کام ہے اس لئے ہمیں زیادہ سوچنا نہیں پڑتا۔ اکثر پوسٹیں "ماشاء اللہ، سبحان اللہ ، واہ واہ، میرا لیڈر شیر ہے، میرے لیڈر کی سادگی دیکھو، لیڈر ہو تو ایسا، میری پارٹی زندہ باد، وغیرہ جیسے جملوں پر مشتمل ہوتی ہیں۔

اس کے بعد ہم اپنی مخالف سیاسی پارٹیوں کے فیس بک پیجز پر جاتے ہیں اور وہاں پر لوگوں کو ان کی اصلیت سے آگاہ کرتے ہیں۔ اس مقصد کے لئے ہمیں کبھی کبھار فوٹو شاپ کا سہارا لینا پڑتا ہے، لیکن چونکہ یہ کام آگاہی اور اصلاح کی نیت سے کیا جاتا ہے، اس لئے ہمارا یقین ہے کہ اعمال کا دارومدار نیتوں پر ہے۔ ہم بھلے مخالف پارٹی والوں کی تصویروں سے سر کاٹ کر کہیں اور فٹ کردیں، یا کسی ڈانس پارٹی کی تصاویر شئیر کریں، ہماری نیت اس قوم کی اصلاح ہے۔ تصویروں کے ساتھ ساتھ ہم لوگوں کو ان پارٹیوں کی منافقت سے بھی آگاہ کرتے ہیں، اور ان کے دوغلے پن کی مذمت مہذب انداز میں کرتے ہیں۔ ہمارے ایسے پوسٹ کچھ یوں ہوتے ہیں: لعنت، لکھ دی لعنت، درفٹے منہ، گو ۔۔۔۔ گو، ۔۔۔۔ کی منافقت وغیرہ وغیرہ۔

چونکہ ہم اور ہماری پسندیدہ سیاسی جماعت کبھی غلط نہیں ہوسکتی، اس لئے ہم یہ سمجھتے ہیں کہ سارے اچھے اور کھرے صحافی ہمارے لیڈروں کے حق میں کالم لکھیں گے۔ اکثر صحافی ایسا کرتے بھی ہیں۔ لیکن پھر ان کی مالی اور سیاسی مجبوریاں آڑے آجاتی ہیں، اس لئے وہ لفافہ وصول کرکے ہمارے لیڈروں کی کردارکشی شروع کردیتے ہیں۔ اس وجہ سے ہم نے اپنا یہ اصول بنا دیا ہے کہ جو ہمارے لیڈروں کے خلاف بولے گا یا کالم لکھے گا، وہ صحافی یا تو بکا ہوا ہے، یا سیاسی تعصب کا شکار ہے۔ ایسے لوگ صحافت کے نام پر دھبہ ہیں، اس لئے ہماری سوشل میڈیا ٹیم دن رات کی محنت سے ایسے لوگوں کی اصلیت آشکار کرنے کے ساتھ ساتھ ان صحافیوں کی بھرپور مذمت بھی کرتی ہے۔

(جاری ہے)

Advertisements

جمہوری آمریت یا فوجی جہموریت


منتخب عوامی حکومتوں کو گرانے سے ملکوں میں بہتری نہیں آتی، بلکہ انتشار اور انارکی قوم کا مقدر ہوجاتی ہے۔ کم از کم پاکستان کی حد تک ہماری تاریخ اس بات کی گواہ ہے کہ جب بھی منتخب حکومتوں کو ختم کیا گیا، ملک میں سیاسی انتشار، بدامنی اور مہنگائی پہلے کی نسبت بڑھ گئے تھے۔ زیادہ دور نہ جائیں 90 کی دہائی کے حالات دیکھ لیں۔

البتہ ہم پاکستانیوں کو مارشل لاء کی اس قدر عادت ہوچکی ہے کہ جمہوری حکومتوں میں ہمارا دم گھٹتا ہے۔ حالانکہ مارشل لاء کے دور میں (ضیاء اور مشرف) جو مظالم پاکستانی عوام پر ڈھائے گئے، اور جو پالیسیاں بنائی گئیں، ان کا خمیازہ ہم آج تک بھگت رہے ہیں۔

اجی چھوڑیں، مشرف دور میں ملک ایسا تو نہ تھا، ڈالر کافی سستا تھا، انسان بھی ڈالروں میں بکتے تھے۔

اس لئے عزیز ہم وطنو، جلدی کرو، موجودہ بادشاہت کو ختم کرکے فوجی بادشاہت کی جمہوری اور عوامی حکومت ملک میں نافذ کردو۔

2060: ملالہ کا پاکستان


معاشرتی علوم کی کلاس کا ایک منظر

پیارے بچوں، آج کی سبق کا عنوان ہے، "ملالہ کی جدوجہد”۔  معاشرتی علوم کے استاد نے چھٹی جماعت کے طلبہ کو کلاس کے آغاز میں بتایا۔

"اچھا تو آپ ملالہ کے بارے میں کیا جانتے ہیں؟” استاد نے طلبہ سے مخاطب ہو کر سوال پوچھا۔

"سر، ملالہ نے لڑکیوں کی تعلیم کے حق کے لئے جدوجہد کی۔ اس وقت ملالہ کو طالبان نے اسکول جانے کی وجہ سے گولی ماری، لیکن ملالہ بچ گئی اور پھر اس نے دن رات ایک کرکے لڑکیوں کی تعلیم کے لئے مہم شروع کی۔” افضال نے ایک ہی سانس میں تفصیل بتاتے ہوئے داد طلب نظروں سے استاد کی طرف دیکھا۔ استاد نے اس کو بیٹھنے کا اشارہ کیا اور شاباشی دی۔

"اس کے علاوہ کسی کو کچھ معلوم ہے ہماری اس لیڈر کے بارے میں؟” استاد نے پھر اپنا سوال دہرایا۔

"سر، ملالہ پاکستان کی وزیر اعظم رہی ہیں۔” اسد نے کھڑے ہوکر استاد کی معلومات میں اضافہ کیا۔

"ٹھیک ہے، آپ لوگ ملالہ کے نام سے واقف ہیں۔ اب اس کی خدمات اور کارناموں کے بارے میں تفصیل سے پڑھتے ہیں۔

ملالہ یوسفزئی پاکستان کی ایک معروف اور مشہور انسانی حقوق کی کارکن تھیں۔ ان کو زمانۂ طالبعملی میں ہی لڑکیوں کے حقوق کے لئے جدوجہد کی بناء پر طالبان نے گولی مار دی۔ لیکن خوش قسمتی سے وہ بچ گئیں اور اس کے بعد انہوں نے اور بھی تندہی سے لڑکیوں کے حق کے لئے آواز بلند کی۔

اس وقت پاکستان پر انتہا پسندوں، دہشت گردوں اور جہادی ذہن رکھنے والے قدامت پسندوں کی سوچ رکھنے والے لوگوں کا غلبہ تھا۔ یہ لوگ اگرچہ حکومت میں نہیں تھے، لیکن معاشرے میں ان کی سوچ کافی حد تک سرایت کرچکی تھی۔ یہ لوگ پاکستان کو پتھر کے دور کے قوانین اور رسوم و رواج کی طرف لے جانے کے لئے کوشاں تھے۔

ان حالات کی وجہ سے ملالہ کو پاکستان میں لڑکیوں کے حقوق کے لئے کام کرنے میں کافی دشواری کا سامنا کرنا پڑا۔ لیکن بھلا ہو ہمارے مغربی دوست ممالک کا، جنہوں نے میڈیا کے ذریعے ملالہ کی مہم کو پذیرائی بخشی اور کئی سال تک ملالہ یورپ میں مقیم رہنے کے بعد واپس پاکستان آئیں۔

پاکستان آکر انہوں نے الیکشن میں حصہ لیا اور بھاری اکثریت سے انتخاب جیتنے کے بعد ملک کی دوسری خاتون وزیراعظم بن گئیں۔ انہوں نے حکومت میں آنے کے بعد سب سے پہلے لڑکیوں کی تعلیم کو لازمی قرار دیا۔”

"سر، اس سے پہلے لڑکیاں تعلیم حاصل نہیں کرسکتی تھیں؟” آصف نے استاد سے سوال کیا۔

” ملالہ کی حکومت سے پہلے پاکستان میں لڑکیوں کی تعلیم کا تصور بھی نہیں کیا جاسکتا تھا۔ اور کچھ جگہوں پر جب لڑکیوں کے اسکول بنے تو وہاں پر طالبان نے پابندی لگائی تھی۔ اسی لیے تو ملالہ کو گولی ماری گئی۔ لیکن ملالہ کی حکومت نے اس بات کو یقینی بنایا کہ ہر لڑکی تعلیم حاصل کرے تاکہ ملک ترقی کرے۔

اس کے علاوہ دقیانوسی خیالات رکھنے والے لوگوں کی بنائی ہوئی قوانین کو پاکستان کی قومی اسمبلی نے 2050ء میں دو تہائی اکثریت سے ختم کردیا۔ 1500 سال پہلے کے معاشرے کی قوانین کو اس جدید دور میں لاگو کرنے کے حامی اس اقدام پر بہت سیخ پا ہوگئے اور ملالہ کی حکومت کے خلاف مظاہرے شروع کردئیے، لیکن حکومت نے ایسے شرپسندوں سے آہنی ہاتھوں نمٹنے کا ارادہ کیا تھا اور ان کے ناپاک ارادوں کو ناکام بنا دیا۔

ان قوانین کی جگہ ترقی یافتہ دور سے مطابقت رکھنے والے قوانین پاس کئے گئے۔ سب سے پہلے پردے پر پابندی لگادی گئی۔ کیونکہ اس کی وجہ سے لڑکیوں کو پسماندہ رکھا جارہا تھا۔ اس کے بعد نصاب سے جہاد سے متعلق تمام آیات نکال دی گئی۔ انتہا پسندوں نے اپنے نظریات نصاب میں شامل کرکے پوری قوم کو دہشت گرد بنانے کی بھر پور کوشش کی تھی، جس کو ملالہ نے ناکام بنادیا۔

اس کے بعد تمام سرکاری اداروں کے ملازمین پر داڑھی رکھنے پر پابندی عائد کردی گئی۔ کیونکہ اس سے پاکستان کا امیج ایک قدامت پسند ملک کے طور پر ہوتا ہے۔ اس لئے ملک کے وسیع تر مفاد میں داڑھی رکھنے پر پابندی لگادی گئی۔

اس کے بعد بھی ملالہ اور تعلیم کے دشمن اپنے پروپیگنڈے سے باز نہیں آئے اور انہوں نے سرے سے اس بات کا انکار ہی کردیا کہ ملالہ پر کبھی حملہ ہوا تھا۔ یہ سازشی نظریات والے لوگ تھے، جن کا مقصد لڑکیوں کو تعلیم سے محروم کرنا تھا۔ اس لئے پاکستانی پارلیمنٹ نے وسیع تر قومی مفاد میں ایک قانون پاس کیا جس کی رو سے جو شخص ملالہ پر حملے کے واقعے سے انکار کرے گا، اس کو پانچ سال قید اور پانچ لاکھ روپے جرمانہ کیا جائے گا اور اس فیصلے کو کسی عدالت میں چیلنج نہیں کیا جاسکے گا۔

اس کے علاوہ بھی ملالہ نے پاکستان میں خواتین کی ترقی کے لئے بہت منصوبے شروع کئے۔ انہی خدمات کی بناء پر پاکستانی پارلیمنٹ اب ملالہ کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے ایک قرارداد پر غور کررہی ہے۔ اس قرارداد کی چیدہ چیدہ نکات مندرجہ ذیل ہیں:

1۔ پاکستان کا نام تبدیل کرکے ملالستان رکھا جائے، کیونکہ پاکستان کے نام سے انتہا پسندی کی بو آتی ہے۔

2۔ ملالہ کی خدمات کے اعتراف کے طور پر پاکستانی کرنسی سے قائد اعظم کی تصویر ہٹا کر ملالہ کی تصویر شامل کی جائے۔

3۔ تمام سرکاری اداروں میں ملالہ کی تصاویر آویزاں کی جائیں۔

4. دینی مدرسوں اورعربی زبان کی تعلیم پر پابندی لگادی جائے کیونکہ جن لوگوں نے ملالہ کو گولی ماری تھی، وہ مدرسے میں پڑھتے رہے تھے۔

5۔ اسلامی نام رکھنے پر پابندی لگادی جائے۔ اب سارے نام پشتو، اردو اور دیگر علاقائی زبانوں کے ہونے چاہیئے۔

6۔ اردو میں عربی زبان کافی حد تک سرایت کرچکی ہے۔ اس لئے ماہرین کی ایک کمیٹی بنائی جائے جو عربی الفاظ کا متبادل تلاش کرنے کے ساتھ ساتھ عربی رسم الخط کا متبادل بھی بناکر پیش کرے۔

امید ہے کہ ملالہ کی خدمات کو سامنے رکھتے ہوئے قومی اسمبلی اس قرارداد کو متفقہ طور پر منظور کرے گی۔”

"تو پیارے بچوں، یہ تھا آج کا معاشرتی علوم کا سبق۔ کل اس سبق سے متعلق ٹیسٹ لیا جائے گا۔ سارے بچے ہوم ورک کر کے آئیں۔” استاد نے کلاس کے اختتام پر طلبہ کو بتایا۔

گدھوں کا اجلاس اور حاسدین کا پروپیگنڈا


ہم نے گدھوں کے اجلاس کی کارروائی کیا نشر کردی، ایسے لگتا ہے یار لوگوں کو ایک موقع مل گیا اس بندہ ناچیز کو پھنسانے کا۔ کوئی کہتا ہے ایسے لگ رہا ہے جیسے ہم نے پاکستانی پارلیمنٹ کی بات کی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ توبہ توبہ ۔۔۔۔ کسی صاحب کو لگ رہا ہے کہ گدھوں کے اجلاس میں گدھے ہی جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسی لئے ایک معاصر اردو فورم پر میری اس تحریر پر تبصرے میں مجھ سے پوچھا گیا کہ آپ وہاں کیا کرنے گئے تھے؟ رپورٹنگ کے لئے یا دعوتِ خاص تھی؟

ہمیں پہلے ہی شک تھا کہ لوگ ہماری صلاحیتوں سے جلتے ہیں، اس لئے معصومانہ انداز میں یہ مشورے بھی دئیے گئے کہ گدھوں پر لکھی گئی تحریر میں پاکستانی سیاستدانوں کو بھی تھوڑی سی جگہ دی جائے۔ یعنی تحریر نہ ہوئی کسی غریب کی میت ہوگئی، جس کی قبر کے لئے تھوڑی سی جگہ کی درخواست کی جاتی ہے۔ ویسے یہ بھی اچھا طریقہ ہے کسی سیدھے سادے بندے کو پھنسانے کا۔ ہم اپنی تعریف دیکھ کر خوش ہوجائیں گے اور ایک اور تحریر لکھ ماریں گے۔ پھر کیا ہوگا؟ اپنے ہاتھوں اپنی قبر کھودنا ہے یہ تو۔

ہم نے لاکھ سمجھایا، کہ بھئی ہمیں‌ ‘باخبر اور باوثوق ذرائع’ سے اطلاع ملی ہے، لیکن کوئی یقین کرنے کو تیار ہی نہیں۔ الٹا کہتے ہیں باخبر ذرائع ہمیشہ جھوٹ ہی نکلتے ہیں۔ اب اس کا ایک ہی حل ہے کہ شک کرنے والوں کو بنفس نفیس اگلے اجلاس کی کارروائی کی کوریج کرنے کے لئے بھیج دیا جائے، تاکہ ان کو یقین ہوجائے کہ گدھوں کے اجلاس میں کیا ہوتا ہے!

ہمیں جن باوثوق ذرائع سے اس اجلاس کی کارروائی کی خبر ملی تھی، اس میں یہ بات بھی صد فی صد یقینی ہے کہ اجلاس کے بعد فیقے کے کھیت کا چارہ بطورِ تواضع گدھوں کے لئے پیش کیا گیا تھا، کیونکہ گدھے چارے کی لالچ کے بغیر کوئی کام نہیں‌ کرتے۔ اس پر یار لوگ طرح طرح کی باتیں بنا رہے ہیں، جو ہمیں اپنے ذرائع سے پہنچ جاتی ہیں۔ ہمیں تو اس پر یہی کہنا ہے کہ ایسے لوگ شائد فیقے سے ہمدردی رکھتے ہیں، اس لئے ‘خاطر تواضع’ کا سن کر ان کے ماتھے پر بل پڑ جاتے ہیں۔

ہمیں پتا ہے کہ اس طرح کی حرکتوں میں جاگیردار ملوث ہیں، کیونکہ وہ فیقے کے برادری کے لوگ ہیں۔ ہم اس تحریری نوٹس کے ذریعے اپنے ان حاسدین کو متنبہ کرتے ہیں کہ اس طرح کی حرکتوں سے باز آجائیں، بصورتِ دیگر گدھوں کے اگلے اجلاس کے بعد سارے گدھے جلوس کی شکل میں خاطر تواضع کے لئے ان جاگیرداروں کے کھیتوں کا رخ کرسکتے ہیں۔ جاگیردار سن لیں! اب ان کی من مانی نہیں چلے گی۔ بس ایک اجلاس کی دیر ہے!

( یہ تحریر 28 اکتوبر 2010ء کو میرے ورڈ پریس پی کے بلاگ پر شائع ہوئی تھی۔ ورڈپریس پی کے بند ہونے کے بعد یہاں پر شائع کررہا ہوں۔)

%d bloggers like this: