Tag Archives: گردی

جوتا گردی


دن بھر کی تازہ ترین خبروں کے ساتھ گلفام خان حاضر ہے۔ سب سے پہلے ایک نظر آج کی اہم ترین خبر پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آج ایک پرہجوم جلسے کے دوران جناب لاچاری پر ایک جوتا کش حملہ ہوا، جس میں وہ بال بال بچ گئے۔ حملہ آور، جس کی عمر تقریباً 50 سال بتائی جارہی ہے، سندھی ٹوپی پہنے ہوئے تھا، اور اس کی ہلکی سی داڑھی بھی تھی۔ اس حملے کے بعد انسداد جوتا گردی فورس فوراً حرکت میں آئی اور مجرم کو رنگے ہاتھوں پکڑ کر نامعلوم مقام پر منتقل کردیا۔

اس خبر پر تبصرہ کرنے کے لئے ہمیں جوائن کیا ہے، وفاقی وزیر برائے انسداد جوتاگردی جناب پریشان ملک صاحب نے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پریشان صاحب، کیا کہئے گا اس جوتا کش حملے پر؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ‘دیکھئے، ہم نے پہلے ہی خبردار کیا تھا، کہ اس طرح کا بزدلانہ حملہ ہوسکتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب دیکھئے نا، ہماری بات صحیح نکلی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جوتا گردوں نے اس بار بھی ایک پرامن محفل کو نشانہ بنایا۔۔۔۔ ہم اس معاملے کی مکمل تحقیقات اقوام متحدہ سے کروائیں گے۔۔۔۔۔۔۔۔ جوتا گرد سن لیں۔۔۔۔۔۔۔وہ ہمیں ان ہتھکنڈوں سے مرعوب نہیں کرسکتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم آخری سانس تک جوتا گردی کے خلاف لڑیں گے، کیونکہ یہ پاکستان کے مفاد میں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم قربانیوں سے نہیں ڈرتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہم نے پہلے بھی بہت جوتے کھائے ہیں، ممم مطلب قربانیاں دی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہماری تاریخ ایسی قربانیوں‌ سے بھری پڑی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ البتہ ہم نے ان جوتا گرد حملوں کو روکنے کے لئے ٹھوس اقدامات کئے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کل سے پورے پاکستان میں اس حوالے سے خصوصی سرچ آپریشن کئے جائیں گے۔

‘پریشان ملک صاحب، کچھ تفصیل بتائیں گے، حکومت کیا اقدامات کرنے جارہی ہے اس حوالے سے؟

‘جی، اس حوالے سے انسدادِ جوتا گردی کمیٹی میں تین نکاتی لائحہ عمل پر اتفاق رائے کیا گیا ہے۔ سب سے پہلے مرحلے میں ملک بھر سے رضاکارانہ طور پر جوتے اکٹھے کئے جائیں‌ گے، جو کہ غیر قانونی طور پر لوگوں کے پاس ہیں۔۔۔۔۔ اس کام کے لئے میڈیا پر عوام سے اپیل کی جائے گی، کہ وہ تحصیل کی سطح پر اس حوالے سے قائم کیمپوں میں اپنے زیرِ استعمال غیر قانونی جوتے جمع کروائیں۔ امید ہے، عوام اس سلسلے میں‌ ہم سے تعاون کرے گی، کیونکہ یہ ایک قومی اہمیت کا حامل ایشو ہے۔ اس مہم کے اختتام پر دوسرے مرحلے کا آغاز کیا جائے گا۔ اس میں چھاپہ مار ٹیمیں غیر قانونی جوتوں کو اپنے قبضے میں لیں گی۔ نیز ماہر جوتا چوروں کی خصوصی خدمات بھی حاصل کی جائیں گی، جو مسجدوں کے باہر سے بڑے پیمانے پر جوتے اکٹھے کرکے ملک کو ان غیرقانونی جوتوں سے نجات دلائیں گے۔ نیز قانون توڑنے والے کو بطورِ سزا بغیر جوتوں کے گھر جانا پڑے گا۔

‘ لیکن پریشان ملک صاحب، اس طرح تو لوگ جوتوں سے محروم ہوجائیں گے۔ آپ نے متبادل کا انتظام کیا ہے؟ یا پھر عوام بغیر جوتوں کے گھومتے پھریں گے؟ اس طرح تو ہم پتھر کے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ معاف کیجئے گا، جنگلی دور میں‌ واپس چلیں جائیں گے۔

‘میرے بھائی، میڈیا والوں کی یہی خرابی ہوتی ہے۔ بات مکمل کرنے نہیں دیتے۔ میری بات سنیں۔ ہم نے پہلے ہی نادرا کا ایک ذیلی ادارہ تشکیل دیا ہے، جو لوگوں کو قانونی طور پر جوتے فراہم کرے گا۔ اس سلسلے میں چارسدہ اور کوہاٹ کے جوتا بنانے والے کاریگروں کا انتخاب جاری ہے۔۔۔۔۔۔ ہر شخص کو شناختی کارڈ کی بنیاد پر ایک جوڑا جوتے کے لئے لائسنس فراہم کیا جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس کے بعد جوتا فراہم کیا جائے گا، جس میں‌ بار کوڈنگ کے ذریعے اس بندے کی تمام معلومات فیڈ کی جائیں گی۔۔۔۔۔ نیز اس میں‌ خفیہ سینسر بھی لگائے جائیں گے۔۔۔۔۔۔۔ جیسے ہی جوتا ہاتھ میں آئے گا، جوتے میں لگا سینسر اس تبدیلی کو نوٹ کرکے جوتے میں لگا ایک خفیہ الارم بجانا شروع کردے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس طرح جوتا کش حملے بڑی حد تک روکے جاسکیں گے۔ اس کے علاوہ ایسی ٹیکنالوجی بھی زیرِ غور ہے، جس میں‌ جوتے سے پاؤں نکالتے ہی جوتے میں لگا الارم بجنا شروع ہوجائے، لیکن ابھی اس میں وقت لگے گا۔

‘پریشان صاحب، وہ تیسرا مرحلہ بھی بتادیں ہمارے ناظرین کو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔’
‘تیسرے مرحلے میں غیرقانونی جوتے رکھنے والوں‌ کے خلاف آپریشن کیا جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دیکھئے ہم سیاسی طور پر مسائل کو حل کرنے کے خواہاں ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن جہاں‌ پر‌حکومتی رِٹ کو چیلنج کیا جائے گا، وہاں جوتے کا جواب فوجی بُوٹ سے دیا جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم ڈرنے والے نہیں ہیں۔

‘پریشان ملک صاحب، آپ کا بہت شکریہ، آپ نے ہمیں اس معاملے پر حکومتی موقف سے آگاہ کیا۔’

ناظرین، اب وقت ہوا ہے ایک بریک کا، بریک کے بعد بات کریں گے ہمارے ایڈیٹر انوسٹی گیشن غمگسار عباسی سے، جو اس معاملے کو میڈیا میں کور کررہے ہیں۔

‘ویلکم بیک ناظرین، ہمارے ساتھ ایڈیٹر انوسٹی گیشن غمگسار عباسی صاحب موجود ہیں۔ غمگسار صاحب، کیا کہئے گا، آج کے تازہ ترین جوتا کش حملے پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حکومتی دعوؤں کے برعکس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جوتا گردی میں کمی نہیں آرہی۔۔۔ کیا وجہ ہے؟

‘ جی، میں تو پہلے سے ہی کہہ رہا تھا کہ یہ حکومت ہی نکمی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ان کے پہننے کے جوتے اور ہیں نمائش کے اور۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جس طرح ہاتھی کے دانت دکھانے کے اور، کھانے کے اور۔۔۔ انہوں نے ابھی تک کوئی سنجیدہ کوشش ہی نہیں کی جوتا گردی کو ختم کرنے کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ پورے ملک میں غیر قانونی جوتے سر عام بک رہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا بنے گا اس ملک کا؟ خدا را ہوش کے ناخن لیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم کیا مستقبل دے رہیں اپنے بچوں کو؟

‘غمگسار صاحب، آپ کا بہت شکریہ، کہ آپ نے اپنے قیمتی خیالات ہم سے شئیر کئے۔

‘ناظرین، ابھی ابھی خبر آئی ہے کہ انسداد جوتا گردی فورس نے کراچی میں ایک غیر قانونی جوتوں کی فیکٹری پر چھاپہ مار کر بڑی تعداد میں جوتے برآمد کئے ہیں۔ ہمارے نامہ نگار کے مطابق، فیکٹری میں کام کرنے والے افراد کو حراست میں لے کر فیکٹری کو سیل کردیا گیا ہے۔

اس خبر پر تبصرہ کرنے کے لئے ہمارے ساتھ ٹیلی فون لائن پر لندن سے جناب بیتاب حسین صاحب موجود ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بیتاب صاحب، کراچی میں یہ کارروائی ہوئی ہے، آپ کا ردِ عمل کیا ہے؟’

‘دیکھئےےےےےے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم نے اس خطرے سے حکومت اور عوام کو بہت پہلے آگاہ کیا تھا، کہ کراچی جوتا گردوں کے قبضے میں‌ جارہا ہے، یہاں پر جوتا گردوں نے اپنے محفوظ ٹھکانے بنالئے ہیں، ان کو زیادہ تر خیبر پختونخواہ سے آنے والے لوگ پناہ دیتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن ہمیں الٹا تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آج دیکھ لیں، ہماری بات سچ ثابت ہوئی نا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔ سوٹ بوٹ والے شریف لوگ جوتا گردوں کے نرغے میں جارہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہم حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ کراچی میں جوتا گردی کے خلاف آپریشن کیا جائے، اس سے پہلے کہ دیر ہوجائے۔

‘ بیتاب حسین صاحب، آپ کا بہت شکریہ، آپ نے ہمیں‌ اس حوالے سے کراچی کی نمائندہ تنظیم کے نقطہ نظر سے آگاہ کیا۔’

ناظرین، اس کے ساتھ ہی ہمارے پروگرام کا وقت ختم ہوتا ہے۔ اپنا خیال رکھئے گا، اور آس پاس کے ماحول پر نظر رکھئے گا، اپنی حفاظت کیجئے اور جوتا گردی کے خلاف جنگ میں‌ اپنا حصہ ڈالئے۔ اپنے میزبان گلفام خان کو اجازت دیجئے۔

اللٰہ حافظ

نوٹ: اس مراسلے میں‌ بیان کئے گئے تمام کردار فرضی ہیں، کسی قسم کی مشابہت پڑھنے والے کی اپنی ذمہ داری ہوگی۔ لکھنے والا اس سے بری الذمہ ہوگا۔

Advertisements
%d bloggers like this: